113

شریفوں،زرداری نے ایک دوسرے کو این آر او 2دیدیا،عمران خان

چیئر مین پی ٹی آئی نے وائٹ پیپر جاری کر دیا
اسلام آباد(نمائندہ بانگ سحر)تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کا کہنا ہے کہ شہبازشریف نے 16 ارب روپے کے کیس کا ریکارڈ غائب کردیا ہے، اور خدشہ ہے کہ یہ لوگ کیسز والا تمام ریکارڈ غائب کردیں گے۔اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کا کہنا تھا کہ ن لیگ اور پیپلزپارٹی کی حکومتیں 2،2 بار کرپشن پر نکالی گئیں، ان کی لوٹ مار کی وجہ سے ملک خسارے میں گیا، مشرف نے انہیں این آر او دیا اور این آر او دے کر ملک کا نقصان کیا، قوم کو پتہ چلنا چاہیے کہ مشرف کے این آر او سے ملک کو کتنا نقصان ہوا، اب یہ این آر او ٹو کرنے جارہے ہیں، این آر او ون سے قوم کو بہت زیادہ نقصان ہوا۔عمران خان کا کہنا تھا کہ والد وزیر اعظم ضمانت پر ہے بیٹا وزیر اعلی وہ بھی ضمانت پر ہے، یہ وہ خاندان ہے جس نے ملک کو 30 سالوں سے لوٹا ہے، یہ لوگ ہم پر الزام لگا رہے تھے کہ انتقامی کارروائی کررہے ہیں ہم نے اپنے دور حکومت میں ان کے خلاف کوئی کرپشن کیسز دائر نہیں کیے، شریف فیملی کے سارے کیسز 2008 سے 2018 تک قائم ہوئے، ہمارے دور میں نیب آزاد ادارہ تھا وہاں یہ کیسز چل رہے تھے، ہمارے دور میں شہباز شریف کے خلاف ایف آئی اے نے صرف مقصود چپڑاسی والا کیس درج کیا۔سابق وزیراعظم نے کہا کہ شہبازشریف کے خلاف 16 ارب روپے کے ایف آئی اے میں کیسز ہیں، اور شہبازشریف نے اس کیس کا ریکارڈ غائب کردیا ہے، انہوں نے اپنے نوکروں کے ناموں پر پیسہ لیا، مقصود چپڑاسی کے نام پر اربوں روپے بیرون ملک بھیجا، یہ لوگ ہنڈی حوالہ کے ذریعے چوری کا پیسہ بیرون ملک بھیجتے ہیں، انہوں نے اس کیس کے افسران کے تبادلے کر دئیے ہیں، پراسیکیوٹر کو عدالت جانے سے منع کردیا گیا ہے، اور سارا ریکارڈ انہوں نے خود لے لیا ہے، خدشہ ہے کہ یہ لوگ ریکارڈ غائب کردیں گے، انہیں ملک کی فکر نہیں اپنے کیسز ختم کرنے پر توجہ دے رہے ہیں، یہ لوگ کرپشن کے سارے کیسز ختم کرائیں گے، لیکن ایف آئی اے کا کیسز بہت زیادہ طاقتور کیس ہے۔چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ پانامہ پیپرز میں انکشافات کے علاوہ بھی چھپی پراپرٹیز ہیں،40 سے 45 ارب کے 16 کیسز ہیں جن کا فیصلہ ہوچکا ہے، ان کے اوپر 4 نیب کیسز ہیں، نواز شریف کو سزا ہو چکی ہے اور وہ سزا سے بچنے کے لیے ملک سے باہر بھاگے ہیں، حسن نواز ان کے دور میں بیرون ملک فرار ہوئے ہیں، جب ان سے سوال ہوا تو انہوں نے کہا کہ ہم پاکستان کے شہری نہیں ہیں، 3 بار ملک کے وزیر اعظم رہنے والے کے بیٹے کہتے ہیں ہم پاکستانی نہیں ہیں، مریم نواز کو بھی سزا ہوچکی ہے۔عمران خان نے کہا کہ مجھ پر توشہ خانہ کا الزام لگایا جارہا ہے، جب کہ ان کے دور میں تحائف لینے کے لئے 15 فیصد رقم توشہ خانہ کو جاتا تھا، ہمارے دور میں توشہ خانہ کو 50 فیصد جاتا تھا۔مسجد نبویﷺ کی توہین کے حوالے سے عمران خان کا کہنا تھا کہ مدینہ میں جب واقعہ ہوا اس پر ہمارا شب دعا کی تقریب چل رہی تھی، جب شب دعا سے فارغ ہوئے تو مدینے کے واقعے کا علم ہوا، ہم پر الزام لگایا جارہا ہے کہ مسجد نبویﷺ کی توہین کا ہم نے کہا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں