54

سیاسی و عسکری قیادت کے مابین مکمل ہم آہنگی

سیاسی و عسکری قیادت کے مابین مکمل ہم آہنگی
تحریر: ثوبیہ جے مقدم
وزیر اعظم شہباز شریف نے کابینہ کے اہم ارکان کے ساتھ جی ایچ کیو کا دورہ کرکے واضح پیغام دیا ہے کہ ملک میں حکومت اور ریاست کے معاملات میں سیاسی و عسکری قیادت کے مابین مکمل ہم آہنگی ہے جس کے نتیجے میں تمام تر توجہ معیشت کی تیر رفتار بحالی پر مرکوز کی جائے گی اور ملک میں عدم استحکام پیدا کرنے کے خواہاں عناصر کو ناکامی کا منہ دیکھنا پڑے گا۔
واضح رہے کہ شہباز شریف کی سیاست ہمیشہ سے اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ عدم تصادم اور ہم آہنگی کے اصول پر مبنی رہی ہے۔ ایسے میں ملک کو درپیش ہمہ جہت چیلنجز سے عہدہ بر آ ہونے کے لئے یہ امر انتہائی خوش آئند ہے کہ وزیراعظم شہباز شریف کی قیادت میں تمام سٹیک ہولڈرز پوری یکسوئی کے ساتھ ملک و قوم کو درپیش داخلی و خارجی چیلنجوں پر قابو پانے کی متفقہ حکمت عملی وضع کرنے اور اس پر عملدرآمد میں تاریخی کامیابیاں حاصل کر پائیں گے۔
وزیراعظم کے دورہ جی ایچ کیو کے کئی مقاصد ہو سکتے ہیں۔ ایک تو ملکی معیشت کی بحالی کے منصوبے میں فوج ایک اہم اسٹیک ہولڈر کے طور پر سامنے ائی ہے۔ آرمی چیف جنرل عاصم منیر متعدد بار اعلان کر چکے ہیں کہ فوج ملکی معاشی بحالی کے کسی منصوبہ میں خلل ڈالنے کی اجازت نہیں دے گی۔
وزیر اعظم شہباز شریف نے دوسری مرتبہ وزارت عظمی کا عہدہ سنبھالنے کے بعد ملکی معیشت کے استحکام کو اپنا اولین ہدف قرار دیا ہے۔ایسے میں جہاں عالمی اداروں و دوست ممالک کے مالی تعاون کی اشد ضرورت ہے وہیں ملک میں سیاسی استحکام اور ہم آہنگی پیدا کرنا بھی اہم ہے۔اس تناظر میں وزیر اعظم نے جی ایچ کیو کا دورہ کرکے اور فوجی قیادت کے ساتھ “ہم آہنگی و اشتراک” کا پیغام دے کر درحقیقت یہ اشارہ بھی دیا ہے کہ اگر کسی نے لاقانونیت اور شور شرابے کے ذریعے ملک میں بدامنی پھیلانے کی کوشش کی تو اس کی لڑائی صرف حکومت کے ساتھ نہیں ہوگی بلکہ فوج کی قیادت میں ریاست بھی حکومت کی پشت پر ہوگی۔
آئی ایس پی آر نے گزشتہ روز وزیر اعظم اور آرمی چیف کی ملاقات کے بارے میں اعلامیہ میں بتایا ہے کہ آرمی چیف نے کہا کہ “پاک فوج قوم کی توقعات پر پورا اترتی رہے گی اور پاکستان کو درپیش سکیورٹی چیلنجز سے نمٹنے میں حکومت کی بھرپور حمایت کرے گی۔ دورے کے اختتام پر سویلین اور عسکری قیادت نے قومی مفادات کو برقرار رکھنے، خوشحال اور محفوظ پاکستان کیلئے مل کر کام کرنے کے عزم کا اعادہ کیا”۔
ادھر جناب آصف علی زرداری کے ایک بار پھر سے بھاری اکثریت سے صدر مملکت منتخب ہونے سے بین الاقوامی سطح پر یہ مثبت پیغام گیا ہے کہ “مفاہمت کے بادشاہ” کی شہرت رکھنے والے صدر زرداری کی ایوان صدر میں موجودگی بذات خود ملک میں سیاسی استحکام کی علامت ہے۔
ایسے میں وزیراعظم نواز شریف کا دورہ جی ایچ کیو اور اسکے بعد جاری کردہ اعلامیہ یقینآ پاکستانی عوام کے لئے روشن اور بہتر مستقبل کی نوید ہے اور اس بات کا برملا اعلان ہے کہ ملک میں انارکی و عدم استحکام کے خواہاں منفی عناصر کے مقدر میں ناکامی و مایوسی کے سوا کچھ نہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں